محمد ﷺ غیر مسلم دانشوروں کی نظر میں

للہ تعالی نے محمد ﷺ کوتمام لوگوں کی طرف رسول بناکرمبعوث کیا اوران پرقرآن مجید نازل فرماکر دعوت الی  اللہ کا حکم دیا جیسا کہ اللہ تعالی نے فرمایا  : اے نبی (ﷺ) یقینا ہم نے آپ کو (رسول بنا کر) گواہیاں دینے والا ، خوشخبریاں سنانےوالا اورآگاہ کرنے والا بنا کر بھیجا ہے ، اوراللہ تعالی کے حکم سے اس کی طرف بلانے والا روشن چراغ (الاحزاب : 45 - 46 ) ۔ اور ساتھ ہی  اللہ تعالی نے محمد ﷺ کو بہترین اخلاق کا پیکر بنایا، فرمان باری تعالی ہے: اور بیشک آپ بہت بڑے (عمده) اخلاق پر فائز ہیں۔(القلم: 4)، آپ ﷺ کی شخصیت سے اپنے پرائے سب متاثر ہوئے، جن میں بہت سارے غیر مسلم بھی آپ کی ہماگیر شخصیت سے بے حد  متاثر ہوئے اور انہوں نے بے ساختہ آپ ﷺ کے متعلق حقیقت پسندانہ تبصرہ کیا، جن میں سےچند کا نیچے تذکرہ کیا جارہا ہے۔

موہن داس کرم چند گاندھی (1869-1948 کانگریسی راہنما)

مجھے پہلے سے زیادہ اس بات کا یقین ہو چلا ہے کہ اسلام نے تلوار کے زور پر اپنا مقام پیدا نہیں کیا، بلکہ اس کا سبب پیغمبر کا اپنی ذات کو کاملاً فنا کرنا، حد درجہ سادگی، اپنے وعدوں کی انتہائی ذمہ داری سے پابندی، اپنے دوستوں سے انتہائی درجے کی عقیدت، دلیری، بے خوفی، اپنے مشن اور خدا پر پختہ ایمان ہے۔

لا مارٹائن (1790-1869فرانسیسی ادیب، لکھاری اور سیاستدان)

اگر ہدف کی عظمت، وسائل کی قلت اور ناقابل یقین نتائج ہی انسان کی زیرکی کے مظاہر ہیں تو کون ہے جو جدید انسانی تاریخ میں کسی بھی شخص کا محمد سے مقابلہ کرسکے؟ دنیا کے معروف ترین انسانوں نے صرف ہتھیار، قوانین اور سلطنتیں بنائیں۔ انھوں نے اگر کسی بھی چیز کی بنیاد رکھی جو زیادہ تر مادی قوت پر مشتمل تھی، تو وہ ان کی آنکھوں کے سامنے ہی تنزل کا شکار ہوگئی۔ لیکن اس شخص نے اس وقت کی دنیا کی ایک تہائی اکثریت پر اپنے اثرات مرتب کیے اور اس سے بھی بڑھ کر اس نے قربان گاہوں، خداﺅں، ادیان، نظریات اور روحوں کو متاثر کیا …..فتح کے لیے صبر، اولعزمی جو کہ ریاست کے حصول کے لیے نہیں بلکہ ایک نظریہ کے لیے تھی، نہ ختم ہونے والی دعائیں، خدا سے راز و نیاز، وفات اور وفات کے بعد حاصل ہونے والی کامیابیاں اس بات کا ثبوت ہیں کہ وہ دھوکہ نہیں تھا بلکہ یہ سب، اس بات کا ثبوت ہیں کہ اس کے پختہ یقین نے ہی اسے یہ طاقت دی کہ وہ ایک عقیدے کا احیاء کرے۔یہ عقیدہ دو جہتی تھا، اس کی ایک جہت خدا کی وحدانیت اور دوسری جہت خدا کا غیر مادی ہونا ہے۔ پہلی جہت بیان کرتی ہے کہ خدا کیا ہے اور دوسری جہت بتاتی ہے کہ خدا کیا نہیں۔ فلسفی، خطیب، پیغمبر، قانون دان، مرد میدان، فاتح نظریات، منطقی عقائد کا احیاء کرنے والا، بیس زمینی اور ایک روحانی سلطنت کا بانی محمد ہے۔ ہر وہ معیار جس پر کسی انسان کی بڑائی کو پرکھا جاسکتا ہے، ہم یہ کہنے میں حق بجانب ہیں کہ کیا کوئی اس سے عظیم انسان تھا۔؟